فردوس مارکیٹ میں بننے والے”لال شہباز قلندر انڈر پاس “نے شہریوں کی زندگی اجیرن کردی،سیوریج سسٹم مکمل تباہ ،کئی ماہ سے گٹروں کا ابلتا پانی وزیراعلیٰ کا منہ چڑانے لگا

شہر لاہور میں وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کے پہلے میگا پراجیکٹ”لال شہباز قلندر انڈر پاس “کی نامکمل تکمیل نے فردوس مارکیٹ اور قرب و جوار کی آبادیوں میں رہائش پذیر ہزاروں افراد کی زندگی اجیرن کر دی ،انڈر پاس کی نامکمل تکمیل نے فردوس مارکیٹ کے سیورج سسٹم کو مکمل ناکارہ کردیا ،کئی ماہ سے گٹروں کا ابلتا پانی بزدار حکومت کا منہ چڑانے لگا ،ناقص میٹریل سے بننے والی سروس روڈ بھی تعمیر کے چندروز بعد ہی بیٹھ گئی ، فردوس مارکیٹ کی دونوں بڑی مساجد کے باہر بھی 24 گھنٹے گٹروں کا پانی ابلنے لگا جس کی وجہ سے نمازیوں کو بھی شدید مشکلات کا سامنا ،علاقے میں کوڑے کے ڈھیر اور گٹروں کے ابلتے پانی سے  بیماریاں پھیلنے کا خدشہ ۔

تفصیلات کے مطابق گذشتہ سال26نومبرکو کئی بارکی ڈیڈ لائن دینےکےبعدوزیراعلیٰ پنجاب نےلاہورکےپوش علاقےفردوس مارکیٹ میں زیرتعمیر لال شہباز قلندرانڈرپاس کاافتتاح کردیاتھاتاہم افتتاح کےکئی ہفتےبعدبھی ابھی انڈرپاس کےاطراف میں کام نامکمل ہی ہےجبکہ ٹریفک کی روانی کو براقرار رکھنے کے لئےبنائےجانےوالےانڈرپاس نےفردوس مارکیٹ ،جےبلاک،تھےزیلدار،ببی چوک اورمزار قطب شاہ کے گردو نواح میں رہنے والے ہزاروں لوگوں کی زندگی اجیرن کر دی ہے ،انڈر پاس بنانے والی کمپنی نے زیر زمین سڑک تو بنا دی لیکن علاقے کے سیوریج سسٹم کو مکمل تباہ کر دیا ہے جس کی وجہ سے دوماہ سے زیادہ عرصہ ہونے کے باوجود گٹروں نے ابلنا بند نہیں کیا ،تعفن زدہ اور بدبو دار پانی کھڑا ہونے سےکاروبار بھی تباہ ہو چکا ہےجبکہ علاقے میں قائم مساجد کے باہر بھی 24 گھنٹے پانی کھڑا ہونے سے نمازیوں کو بھی شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔