دہشتگردوں سے کوئی سمجھوتا ہو گا اور نہ ہی اُنہیں کوئی رعایت دی جائے گی ، حکومت نے دوٹوک اعلان کردیا

وزیراعظم کے معاون خصوصی علامہ حافظ طاہر محمود اشرفی نے کہا ہے کہ بھارت دہشتگردوں کو منظم کرتے ہوئے اُن کی فنڈنگ کر رہا ہے،ہزارہ برادری کے غم زدہ بھائیوں سے اظہار ہمدردی کرتے ہیں،دہشت گردوں سے کوئی سمجھوتا ہو گا اور نہ ہی اُنہیں کوئی رعایت دی جائے گی،جلسے جلوس کرنا اپوزیشن کا حق ہے،عوام نے اُن کے بیانیے کو مسترد کر دیا ہے اور اب وہ بیانیہ بدل بدل کر بات کر رہے ہیں۔

نجی ٹی وی ابتک نیوز کے مطابق لاہور میں مختلف مسالک کے علما ئےکرام کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے علامہ حافظ طاہر اشرفی نے کہا کہ مچھ کے علاقے میں بے دردی سے قتل ہونے والے ہزارہ قبیلے کے 11 افراد کے لواحقین کے ساتھ کھڑے ہیں،ان کو انصاف دلانے کے لیے ہر فورم پر آواز بلند کریں گے،ملک دشمن عناصر کو پاکستان میں فرقہ واریت پھیلانے کی اجازت نہیں دیں گے، فرقہ واریت پھیلانے میں بھارت کا بڑا ہاتھ ہے جس کا اعتراف کلبھوشن یادیو نے خود کیا تھا۔علامہ طاہر محمود اشرفی نے کہا کہ کسی گروہ، جتھے یا جماعت کو اپنی سوچ مسلط کرنے کا حق نہیں دیا جا سکتا ،پاکستان کو امن کا گہوارہ بنائیں  گے،فلسطین کے مسئلے پر موجودہ حکومت ،وزیراعظم ،آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور سیکیورٹی اداروں کے لئے چند روز پہلے صدر فلسطین اور قاضی القضاءفلسطین کی جانب سے لکھا جانے والا خط  کافی ہےجس میں اُنہوں نےکہا کہ پاکستان کی پالیسی پر ہمیں فخر ہے،پاکستان کی یہ پالیسی پورے عالم اسلام کی ترجمانی ہے اورپاکستان نے بہادرانہ انداز میں مسئلہ فلسطین کو پیش کیا ہے”ہمارے لئے یہ گواہی کافی ہے۔

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ(پی ڈی ایم)کے رہنماؤں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے علامہ حافظ طاہر اشرفی نے کہا کہ وہ پہلے خود تو کسی بیانیے پر متحد ہو جائیں، اِن کا دو ماہ پہلے والا بیانیہ اب تبدیل ہو چکا ہے۔اس موقع پر مولانا محمد حسین اکبر نے کہا کہ تمام مکاتب فکر کے علمائے کرام تفرقہ بازی کے خلاف متحد ہیں،  حکومت مچھ میں قتل ہونے والوں کے قاتلوں کو جلد کیفر کردار تک پہنچائے گی۔