نیم برہنہ خواتین کے ذریعے تابوت فروخت کرنے پر ہنگامہ

وارسا(مانیٹرنگ ڈیسک) چیز کوئی بھی ہو، اس کے اشتہار میں ایک خوبرو لڑکی کا ہونا لازم قرار پا چکا ہے، خواہ اس چیز کا صنف نازک سے دور دور کا کوئی واسطہ نہ ہو۔ اب پولینڈ میں تابوت بنانے والی ایک کمپنی نے اپنے تابوتوں کے اشتہار میں بھی نیم برہنہ ماڈلز کو شامل کرکے ہنگامہ برپا کر دیا ہے۔ انڈیا ٹائمز کے مطابق اس کمپنی کا نام لنڈنر(Lindner)بتایا گیا ہے جس نے اپنے تابوتوں کی تشہیری مہم میں خوبرو ماڈلز کو ہائر کیا۔ ان ماڈلز نے نیم برہنہ حالت میں کمپنی کے تابوتوں کے ساتھ اشتہارات میں کام کیا۔ 

کمپنی کا دعویٰ ہے کہ نیم برہنہ ماڈلز سے اپنے تابوتوں کی تشہیر کروانے پر ان کی شہرت اور تابوتوں کی مانگ میں بہت اضافہ ہوا ہے تاہم کمپنی کی اس حرکت نے ملک کے مذہبی حلقے کو شدید برانگیختہ کر دیا ہے اور چرچ کی طرف سے کمپنی کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ چرچ کی طرف سے کمپنی کے اس اقدام پر کہا گیا ہے کہ ”موت اور انسان کے آخری سفر سے متعلق اشیاءکا معاملہ عزت کا مستحق ہے۔ موت اور جنسیت کو باہم ملانا قابل تعریف فعل نہیں ہے اور ایسی حرکت سے گریز کرنا چاہیے۔“

Leave a Reply